33.1 C
Delhi
May 20, 2024
Hamari Duniya
قومی خبریں

ضمانت کے بعد رہائی میں تاخیر پر سپریم کورٹ سخت، متعدد  ہدایات جاری کیں

نئی دہلی،02فروری۔(ایچ ڈی نیوز)۔

ضمانت ملنے کے باوجود مقررہ شرائط پوری کرنے میں ناکام رہنے والے زیر سماعت قیدیوں کے لیے سپریم کورٹ نے ایک اہم قدم اٹھایا ہے۔ عدالت نے ضمانت ملنے کے بعد زیر حراست قیدیوں کے لیے سات اہم ہدایات جاری کی ہیں۔ عدالت ازخود نوٹس لے رہی تھی اور ضمانت سے متعلق قواعد وضع کرنے کے معاملے کی سماعت کر رہی تھی۔

واضح رہے کہ  صدرجمہوریہ  دروپدی مرمو نے 26 نومبر کو یوم آئین کے موقع پر سپریم کورٹ کی تقریب میں اپنے خطاب کے بعد ایک جذباتی اپیل کی تھی ۔ انہوں نے کہا تھا کہ ملک کی جیلوں میں بند ہزاروں قیدیوں کو ضمانت پر رہا کرنے کا عدالتی حکم ہے، لیکن ان کے پاس ضمانت کی رقم تک نہیں ہے۔ اس لیے وہ جیل میں  ہیں۔ عدالت اور حکومت ان کے لیے کچھ کرے۔ اس اپیل کے دو دن بعد سپریم کورٹ کے اس بنچ نے ازخود نوٹس لیتے ہوئے رپورٹ طلب کی تھی۔

سپریم کورٹ  کی جانب سے اس سلسلے میں 7 رہنما خطوط جاری کئے گئے ہیں

سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ جب عدالت زیر سماعت قیدی/مجرم کو ضمانت دیتی ہے، تو اسے اسی دن یا اگلے دن جیل سپرنٹنڈنٹ کے ذریعے قیدی کو ای میل کے ذریعے ضمانت کے حکم کی سافٹ کاپی بھیجنی ہوگی۔ جیل سپرنٹنڈنٹ کو ضمانت دینے کی تاریخ ای-جیل سافٹ ویئر یا کسی دوسرے سافٹ ویئر میں درج کرنی ہو گی (جو محکمہ جیل استعمال کر رہا ہے)۔

سپریم کورٹ نے اپنی ہدایات میں مزید کہا کہ اگر ضمانت کی تاریخ سے 7 دنوں کے اندر ملزم کو رہا نہیں کیا جاتا ہے، تو یہ جیل سپرنٹنڈنٹ کا فرض ہوگا کہ وہ ڈی ایل ایس اے (ڈسٹرکٹ لیگل سروسز اتھارٹی) کے سیکرٹری کو مطلع کرے جو قیدی کے ساتھ معاملہ کرے گا۔ ہر ممکن طریقے سے قیدی کی مدد اور بات چیت کے لیے پیرا لیگل رضاکار یا جیل وزٹنگ ایڈووکیٹ کا تقرر کر سکتا ہے۔

این آئی سی ای جیل سافٹ ویئر میں ضروری فیلڈز بنانے کی کوشش کرے گا تاکہ محکمہ جیل کی طرف سے ضمانت کی تاریخ اور رہائی کی تاریخ درج کی جا سکے اور اگر قیدی کو 7 دنوں کے اندر رہا نہیں کیا جاتا ہے تو ایک خودکار ای میل سکریٹری، ڈی ایل ایس اے کو بھیجی جا سکتی ہے۔

سکریٹری، ڈی ایل ایس اے کے مجرموں کی معاشی حیثیت کا پتہ لگانے کے لیے، قیدی کی سماجی و اقتصادی حیثیت کے بارے میں رپورٹ تیار کرنے کے لیے پروبیشن افسران یا پیرا لیگل رضاکاروں کی مدد لے سکتا ہے۔ تاکہ متعلقہ عدالت کو ضمانت کی شرائط میں نرمی کی درخواست کے ساتھ پیش کیا جا سکے۔

ایسے معاملات میں جہاں زیر سماعت یا مجرم یہ درخواست کرتا ہے کہ وہ رہا ہونے کے بعد ضمانتی مچلکے یا ضامن جمع کرا سکتا ہے، تو ایک مناسب کیس میں، عدالت ملزم کو ایک مخصوص مدت کے لیے عارضی ضمانت دینے پر غور کر سکتی ہے تاکہ وہ ضمانتی بانڈ یا ضامن پیش کر سکے۔

اگر ضمانت کی تاریخ سے ایک ماہ کے اندر ضمانتی مچلکے جمع نہیں کرائے جاتے ہیں، تو متعلقہ عدالت اس معاملے کا از خود نوٹس لے سکتی ہے اور اس بات پر غور کر سکتی ہے کہ ضمانت کی شرائط میں ترمیم/ نرمی کی ضرورت ہے یا نہیں۔ملزم/مجرم کی رہائی میں تاخیر کی ایک وجہ مقامی ضمانت پر اصرار ہے۔ یہ تجویز  بھی پیش کی جا سکتی ہے  کہ ایسے معاملات میں عدالتیں مقامی ضمانت کی شرط عائد نہیں کر سکتیں۔

جسٹس سنجے کشن کول اور جسٹس ابھے ایس اوک کی بنچ نے حکم میں یہ بھی کہا کہ حکومت ہند کو این ایے ایل ایس اے(نیشنل لیگل سروسز اتھارٹی) سے بات کرنی چاہئے کہ این ایل ایس اے اور ڈی ایل ایس اے  کے سیکرٹریوں کو ای جیل پورٹل تک رسائی فراہم کی جائے یا نہیں۔ اے ایس جی کے ایم نٹراج، مرکز کی طرف سے پیش ہوئے، نے بنچ کو یقین دلایا کہ اجازت دینے میں کوئی مسئلہ نہیں ہوگا، تاہم، وہ ہدایات طلب کریں گے اور سماعت کی اگلی تاریخ کو عدالت کو مطلع کریں گے۔ معاملے کی اگلی سماعت 28 مارچ کو ہوگی۔

Related posts

مولانا خالد سیف اللہ رحمانی کا مسلم پرسنل لا بورڈ کے پیغام کو گھر گھر تک پہنچانے کا عزم

Hamari Duniya

بی جے پی لیڈرسونالی فوگٹ کی گوا میں موت ،چند دن قبل بی جے پی میں شامل ہوئے کلدیپ بشنوئی کے خلاف لڑچکی ہیں الیکشن

Hamari Duniya

مسلم پرسنل لا بورڈ کو نشانہ بنانے کی کوئی بھی کوشش قابل قبول نہیں: مولانا محمود اسد مدنی

Hamari Duniya