33.1 C
Delhi
June 22, 2024
Hamari Duniya
Breaking News بین الاقوامی خبریں سعودی عرب

سرسید نے نہ صرف ہندوستان بلکہ برصغیر کے مسلمانوں کی قسمت بدل دی: سینئر صحافی قربان علی

Sir Syed Day

سعودی کے شہر الجبیل میں سرسید ڈے منایا گیا، ہندوستان سے مدعو مہمان خصوصی طارق صدیقی کا زکوۃ منیجمنٹ سسٹم بنانے پر زور

Sir Syed Day
سعودی عرب میں سر سید ڈے منایا گیا

ریاض ،28دسمبر( ہ س)۔
سعودی عرب کے انڈسٹریل ایریا الجبیل میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی الومنائی ایسوسی ایشن الجبیل کے زیر اہتمام سرسید ڈے کا اہتمام کیا گیا۔ جس میں بی بی سی میں خدمات انجام دے چکے سینئرصحافی قربان علی بطور صدرشریک ہوئے اور ہندوستان سے سیاستدان ، بزنس مین و سماجی کارکن طارق صدیقی بطور مہمان خصوصی شریک ہوئے۔
سینئر صحافی قربان علی نے اپنے خطاب میں کہا کہ سر سید نے نہ صرف ہندوستان بلکہ برصغیر کے مسلمانوں کی قسمت بدل دی، اس لئے بار بار یاد کرنا بے حد ضروری ہے۔ مہاتما گاندھی نے کہا تھا کہ وہ تعلیم کے پیغمبر ہیں، آنے والی نسلیں ان کی قرض دار رہیں گی۔ سر سید نے تمام تر مخالفت اور پریشانیاں جھیل کر علی گڑھ مسلم یونیورسٹی جیسا ادارہ قائم کیا اور افسوس کی بات ہے کہ ڈیڑھ سو سالوں کے بعد بھی سر سید کے نام پر کوئی دوسرا ادارہ نہیں قائم ہو سکا۔ ہندوستان کے سیاستدانوں نے مسلمانوں کا ووٹ لیا لیکن ان کی حالت بدلنے کے لئے کچھ نہیں کیا۔ اس سے بھی اہم بات یہ ہے کہ ہم نے خود اپنی حالت کو بدلنے کے لیے کچھ نہیں کیا۔ ہم باتیں بہت کرتے ہیں اور امید کرتے ہیں کہ کوئی پڑوسی کوئی دوسرا ذمہ داری قبول کرلے، لیکن جب تک اجتماعی طور پر متحد ہو کر ہم اپنی ذمہ داریوں کو نہیں نبھائیں گے تب تک کوئی تبدیلی کوئی امید نظر نہیں آتی ہے۔قربان علی نے کہا کہ کوئی بھی ملک مذہبی منافرت کی بنیاد پر نہیں چل سکتا ہے۔ 1947 میں تقسیم ہند کے بعد کے حالات سبھی کے سامنے ہیں۔ آج پھر ہندوستان میں مذہبی منافرت اپنے شباب پر ہے۔ مسلمان ہی نہیں بلکہ سبھی اقلیت، پسماندہ طبقہ اور خواتین کی حالت بہتر نہیں ہے۔ ان میں خوف و ہراس ہے۔ ملک کی بقا اور سالمیت کے لئے سیکولر طبقہ کے ساتھ ہمیں بھی اپنی ذمہ داری نبھانی چاہئے۔

Sir Syed Day
سرسید ڈے کے موقع پر سعودی عرب میں ایک تقریب کا انعقاد کیا گیا

مہمان خصوصی آل انڈیا پروفیشنلس کانگریس کے مشرقی یوپی کے صدر طارق صدیقی نے اپنے خطاب میں کہا کہ ہماری تین پہچان ہیں، ایک ہم مسلمان ہیں، دوسرے ہم علیگ ہیں، تیسرے ہم انڈین مسلمان ہیں۔ بحیثیت مسلمان ہم ایک دوسرے پر تنقید کرتے ہیں، ایک دوسرے کو ذمہ دار قرار دیتے ہیں، لیکن خود ذمہ داری لینا نہیں چاہتے ہیں، فرائض کو بھول کر ہم حقوق کی لڑائی میں بہت آگے نکل گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں عصری اور دینی تعلیم کی مخالفت سے باہر نکلنا ہوگا اور وہ تعلیم جو انسانیت کو فائدہ پہنچائے اسی تعلیم کو دینی اور اصل سمجھنا ہو گا۔ بحیثیت علیگ ہماری ایک منفرد شناخت ہے۔ ہمیں مشکلات سے بھاگنا نہیں چاہیے، ہمیں اپنی ذمہ داریوں کو گلے لگانا ہوگا۔ بحیثیت ہندوستانی مسلمان، ہم کہیں بھی کسی بھی ملک میں ہوں، ہمیں اپنے ہندوستان کی ترقی اور بلندی کے لئے فکر کرنا چاہیے۔ ہندوستان ایک بڑی اکنامی ہے، ہمیں فکر کرنی ہوگی کی ہم ہندوستان کی اکنامی میں کس طرح سے کنٹریبیوٹ کریں۔ انہوں نے زکوۃ مینجمنٹ سسٹم پر تفصیلی گفتگو کی اور کہا کہ فرداً فرداً زکوة کی ادائیگی کے ساتھ ہی ایک اجتماعی نظام بنانا چاہیے تاکہ ضروری اور اہم کاموں کو اس کے ذریعے مکمل کیا جا سکے اور جو لوگ ابھی زکوة کے مستحق ہیں انہیں زکوة دینے والا بنایا جا سکے۔
تقریب میں دیگر سینئر علیگ نے بھی خطاب کیا۔ اس موقع پر مہمان ذی وقار عبدالغفور دانش، دمام اموبا کے صدر مسرور حسن خان، انیس بخش، معراج انصاری، سید وحید لئیق، آصف صدیقی، محمد نفیس، باقر نقوی، نوید خان، عارف علی صدیقی، غلام مصطفی، ڈاکٹر سلیم، شعیب قریشی، کلیم صدیقی، ثاقب جونپوری، محمد سراج، عاکف کے علاوہ بڑی تعداد میں علیگ و دیگر لوگ موجود رہے۔

Related posts

مسلم پرسنل بورڈ خواتین کو حقوق دلانے کیلئے ہمیشہ کوشاں، حیدر آباد میں اجلاس برائے خواتین سے مقررین کا خطاب

Hamari Duniya

جمعیۃ علمائ ہند کا بڑا اعلان، فروری میں رام لیلا میں جمع ہوں گے لاکھوں فرزندان توحید

Hamari Duniya

یکساں سول کوڈ کا جن پھر آئے گا بوتل سے باہر، مسودہ تیار، مانسون سیشن میں پیش کئے جانے کا امکان، بی جے پی کی مشن 2024 کی تیاری

Hamari Duniya