36.1 C
Delhi
May 21, 2024
Hamari Duniya
Breaking News مضامین

پی ایف آئی پر پابندی کے وجوہات

PFI- Ban

منصور خان
بانی و قومی صدر صوفی اسلامی بورڈ

یہ کوئی راز نہیں ہے کہ پی ایف آئی ایک ایسی تنظیم ہے جو پہلے سے منصوبہ بند طریقے سے بھارت جیسے گنگا جمنی تہذیب کے ساتھ ملک میں عدم استحکام پھیلانے کے کام میں ملوث ہے۔ آج ملک کی 12 ریاستوں میں سیکورٹی ایجنسیوں کی طرف سے بیک وقت کی گئی کارروائی اس حقیقت کی تصدیق کرتی ہے کہ پی ایف آئی ملک کی اندرونی سلامتی کے لیے خطرہ بن چکا ہے۔2006 میں اپنے قیام کے وقت کوئی نہیں جانتا تھا کہ یہ دراصل کالعدم سیمی کی ایک شکل ہے، جس کے پیچھے ای ایم عبدالرحمن، عبدالحمید، پی کویا کا ہاتھ ہے۔ سیمی کو ایک نئی شکل پی ایف آئی میں متعارف کرایا۔
پی ایف آئی کے نظریے اور اقدامات میں سیمی کا نظریہ واضح طور پر نظر آتا ہے۔ چاہے وہ اسلحہ کی تربیت ہو، آئی ای ڈی بنانے کا واقعہ ہو، مذہبی طور پر اشتعال انگیز سوچ ہو یا داعش اور القاعدہ جیسی دہشت گرد تنظیموں سے اس کے روابط ہوں۔ ان تمام کاموں کی وجہ سے، اس وقت پی ایف آئی کے خلاف ملک بھر میں ئئئءسے اب تک تقریباً 326 مقدمات درج کیے گئے ہیں۔
پی ایف آئی کی قومی، صوبائی اور اتحادی تنظیموں کے عہدیداروں کے خلاف آئی پی سی، پی ایم ایل اے، ایپیڈیمک ایکٹ وغیرہ۔ کچھ معاملات سنگین دفعات میں ہیں جیسے تشدد، قتل، فساد وغیرہ۔
آج پی ایف آئی صرف اپنی غلط ذہنیت کے لیے جانا جاتا ہے جو بنیادی طور پر مذہبی انتشار پھیلانے اور ملک کی خودمختاری کو تباہ کرنے کے لیے متحرک ہے۔ پی ایف آئی کے سربراہ او ایم اے سلام، جنہیں کیرالہ کے بجلی محکمہ سے معطل کر دیا گیا ہے، سرکاری ملازم ہونے کے باوجود اس طرح کی ملک دشمن سرگرمیوں میں ملوث ہیں۔ سنگین جرائم جیسے سنگین جرائم میں پی ایف آئی کا ملوث ہونا سامنے آیا ہے۔
پی ایف آئی کی حراست کے ریاستی جائزے سے یہ واضح ہے کہ پی ایف آئی تقریباً 13 ریاستوں میں مختلف مقدمات میں ملک مخالف سرگرمیوں کے لیے ملزم ہے۔ ان میں سے آندھرا پردیش (30)، بہار (01)، کیرالہ (36)، راجستھان (02)، تمل ناڈو (38)، تلنگانہ (09)، مغربی بنگال (01)، آسام (02)، دہلی (01)۔ ، کرناٹک (33)، مدھیہ پردیش (04)، مہاراشٹر (39)، پڈوچیری (15)، اتر پردیش (26) نمایاں ہیں۔
یہاں تک کہ کچھ پی ایف آئی رہنماو¿ں کے خلاف مختلف ریاستوں میں کئی مجرمانہ مقدمات درج ہیں۔ جیسے آندھرا پردیش میں 5 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف 24 کیس، کیرالہ میں 21 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف 46 کیس، راجستھان میں 1 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف 02 کیس، تامل ناڈو میں 11 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف 35 کیس، آسام میں 1 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف 02 کیس، 1 کیس دہلی میں 02 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف، کرناٹک میں 12 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف 25 کیس، مدھیہ پردیش میں 03 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف، مہاراشٹرا میں 21 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف 41 کیس، پڈوچیری میں 2 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف، 5 اتر پردیش میں 11 پی ایف آئی لیڈروں کے خلاف کیس 23 آئی پی سی اور دیگر ایکٹ کے تحت مقدمات درج کیے جاتے ہیں، جن میں سے بہت سے سنگین مقدمات ہیں جیسے قتل، فسادات، بغاوت وغیرہ سے متعلق۔
پی ایف آئی نے ہندوستانی مسلمان بھائیوں کے پڑھے لکھے طبقے کو بھی ایک منظم طریقے سے دھوکہ دیا ہے۔ اس میں زیادہ تر رہنما نوجوان اور پڑھے لکھے ہیں جو پی ایف آئی کے تباہ کن منصوبے کا جواب دے رہے ہیں۔ حال ہی میں پی ایف آئی اور اخوان المسلمون کے کام کرنے کے انداز میں بھی مماثلت پائی گئی ہے۔پی ایف آئی کا وزن ئئئئدستاویز حال ہی میں بہار پولیس کے ہاتھوں پکڑی گئی ہے، جس میں اسلام کے عقائد کو مسخ کرنے اور ہندوستان کے ساتھی روح کے معاشرے میں زہر گھولنے جیسی چیزیں سامنے آئی ہیں۔ پی ایف آئی کی تنظیمیں آر آئی ایف، اےآئی سی سی , ای آئی ایم,سی ایف ئی مختلف شعبوں میں پی ایف آئی کے ایجنڈے کو آگے بڑھانے میں شامل ہیں۔ واضح رہے کہ پی ایف آئی کی سیاسی شکل ایس ڈی پی آئی ہے، جس کے خلاف وقتاً فوقتاً کئی مقدمات بھی درج ہوتے رہے ہیں۔ دہلی فسادات 2020 میں بھی پی ایف آئی کی شمولیت پائی گئی ہے۔ حالیہ چھاپوں میں پولیس کو کیرالہ، مہاراشٹر میں مذکورہ کیس کے ملزموں سے اسلحہ، بارود اور اشتعال انگیز لٹریچر بھی ملا ہے۔ ایسے پی ایف آئی کیڈر معصوم ہندوستانی مسلم نوجوانوں کو آئی ایس آئی ایس میں بھیجنے کے لیے پھنسانے کے کام میں ملوث پائے گئے ہیں۔
اس میں کوئی شک نہیں کہ اس معاشرے میں پی ایف آئی کا کام معاشرے کے امن کے لیے خطرہ ہے۔ اس لیے اس وقت سیکیورٹی اداروں کی کارروائیاں مکمل طور پر شواہد پر مبنی ہیں۔ پاپولر فرنٹ آف انڈیا اور اس سے منسلک تنظیموں پر 5 سال کے پابندی کا مرکزی حکومت کا فیصلہ مکمل طور پر جائز اور منصفانہ ہے۔ آج کا تقاضہ ہے کہ ہندوستان کے ہندو اور مسلمان متحد ہو کر پی ایف آئی پر پابندی کی حمایت اور خیرمقدم کریں تاکہ سماجی تانے بانے، گنگا جمنی تہذیب کو مضبوط کیا جاسکے۔

Related posts

آزادی کے بعد بہار کے اردو ادبی رسائل

Hamari Duniya

نئے برطانوی وزیراعظم کے بارے میں پاکستان نے بھی کردیا بڑا دعویٰ؟

Hamari Duniya

بی جے پی نے کسانوں کے مسائل سے آنکھیں موندرکھی ہیں، آوارہ جانوروں کی وجہ سے بڑھتے حادثات پر اکھلیش یادو شدید برہم

Hamari Duniya