44.1 C
Delhi
June 18, 2024
Hamari Duniya
قومی خبریں

ہندوستان میں  بی بی سی کے کام کاج پر پابندی کی درخواست سپریم کورٹ سے خارج

نئی دہلی،10فروری(ایچ ڈی نیوز)۔

گجرات فسادات پر  مبنی بی بی سی کی دستاویزی فلم پر  یونیور سٹی کیمپس سے سڑک تک جم کر ہنگامہ ہوا۔خاص طور پر کچھ دائیں بازو کی شدت پسند ہندو تنظیموں نے بڑے پیمانے پر ہنگامہ آرائی کی تھی اور معاملہ سپریم کورٹ تک پہنچ گیا تھا۔تازہ معاملہ میں ہندوستان میں بی بی سی کے کام کاج پر پابندی کا مطالبہ کرنے والی عرضی کو سپریم کورٹ نے خارج کر دیا ہے ۔ میڈیا رپورٹوں کے مطابق  ہندوستان میں بی بی سی کے کام پر پابندی لگانے کی ہندو سینا کی درخواست مسترد کر دی گئی ہے ۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ یہ درخواست بالکل غلط ہے۔ ہم ایسا حکم کیسے دے سکتے ہیں؟ جسٹس سنجیو کھنہ اور جسٹس ایم ایم سندریش کی بنچ نے یہ کہتے ہوئے عرضی خارج کردی کہ اس درخواست میں کوئی میرٹ نہیں ہے۔ درخواست گزار کی جانب سے وکیل پنکی آنند نے کہا کہ بی بی سی پوری طرح سے بھارت مخالف اور پی ایم مودی مخالف مہم چلا رہا ہے۔ عدالت اس پر پابندی لگانے کا حق رکھتی ہے۔

واضح رہے کہ درخواست ہندو سینا کی جانب سے دائر کی گئی تھی۔ اس میں ہندو سینا نے ہندوستان میں برٹش براڈکاسٹنگ کارپوریشن (بی بی سی) کے کام کرنے پر پابندی لگانے اور ہندوستان میں بی بی سی پر پابندی لگانے کا مطالبہ کیا تھا۔ ہندو سینا کی درخواست میں کہا گیا کہ بی بی سی کی بھارت کے اتحاد اور سالمیت کو توڑنے کی سازش کی این آئی اے سے تحقیقات کرائی جائے اور بی بی سی پر بھارت میں پابندی لگائی جائے۔  دراصل، 2002 کے گودھرا فسادات سے متعلق وزیر اعظم مودی پر بی بی سی کی دستاویزی فلم پر حکومت نے پابندی لگا دی تھی۔ پابندی کے خلاف سپریم کورٹ میں درخواست دائر کر دی گئی۔

لائیو لاء کی رپورٹ کے مطابق  ہندو سینا کی درخواست پر سماعت کرتے ہوئے جسٹس سنجیو کھنہ اور جسٹس ایم ایم سندرش کی ڈویژن بنچ نے درخواست کو ’بالکل غلط  ‘ قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیا۔ جسٹس کھنہ نے کہا کہ یہ بالکل غلط ہے۔ درخواست گزار کی نمائندگی کرنے والے سینئر وکیل پنکی آنند نے کہا، “براہ کرم اس صورتحال کو دیکھیں جب یہ دستاویزی فلم بنائی گئی تھی۔ آج صورتحال یہ ہے کہ برطانیہ کے وزیر اعظم کے طور پر ایک ہندوستانی ہے، ہندوستان ایک اقتصادی طاقت بن کر ابھر رہا ہے۔۔ جسٹس کھنہ نے پوچھا

’یہ دلیل کیسے دی جا سکتی ہے؟ آپ چاہتے ہیں کہ ہم مکمل سنسر شپ لگا دیں؟ یہ کیا ہے؟‘ وکیل نے بینچ سے درخواست کی کہ اس معاملے کو دیگر درخواستوں کے ساتھ پوسٹ کرنے کے لیے مرکز کے حکم کو چیلنج کرنے والی دستاویزی فلم “انڈیا: دی مودی کویسچن” تک عوام کی رسائی کو روک دیا جائے۔ تاہم، بینچ نے اتفاق نہیں کیا اور درخواست کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ رٹ پٹیشن مکمل طور پر غلط  خیال کے ساتھ داخل  کی گئی ہے، اس کا کوئی میرٹ نہیں ہے اور اسے خارج کیا جاتا ہے۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے مرکز سے بی بی سی کی دستاویزی فلم ‘انڈیا: دی مودی کویسچن’ کو بلاک کرنے کے اپنے فیصلے سے متعلق متعلقہ ریکارڈ پیش کرنے کو کہا ہے۔ اس معاملے کی سماعت اب اپریل میں ہونی ہے۔ سینئر ایڈوکیٹ سی یو سنگھ، سینئر صحافی این رام، ٹی ایم سی ایم پی مہوا موئترا اور ایڈوکیٹ پرشانت بھوشن کی طرف سے پیش ہوئے، نے سپریم کورٹ کو بتایا کہ یہ ایک ایسا معاملہ ہے جہاں عوامی ڈومین میں احکامات کے بغیر ہنگامی اختیارات کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ دستاویزی فلم کا لنک شیئر کرنے والے ٹویٹس کو بلاک کر دیا گیا ہے۔ اس پر سپریم کورٹ نے کہا کہ ہم حکومت سے اس سے متعلق حکم نامہ داخل کرنے کو کہہ رہے ہیں اور اس کی تحقیقات کریں گے۔

Related posts

AMP creates history, organises the country’s biggest talent search exam across 300+ districts of the Country

Hamari Duniya

جنوبی امریکی ممالک کے دورے پر وزیر خارجہ ایس جے شنکر پہلے گویانا پہونچے

Hamari Duniya

غزہ پر اسرائیلی حملے کو روکنے کے لئے ہندوستان اور عالمی برادری اپنا اثرو رسوخ استعمال کرے: جماعت اسلامی

Hamari Duniya