33.1 C
Delhi
July 15, 2024
Hamari Duniya
Breaking News قومی خبریں

اڈانی گروپ پر بدعنوانی کا الزام ، اپوزیشن پارٹیوں نے پارلیمنٹ کو ٹھپ کردیا

Opposition parties

نئی دہلی، 02 فروری (ایچ ڈی نیوز)۔
پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں کی کارروائی ہنگامہ آرائی کے درمیان جمعرات کو دن بھرکے لیے ملتوی کر دی گئی کیونکہ اپوزیشن نے اڈانی گروپ کے حصص گرنے کے بعد پبلک سیکٹر کمپنیوں میں سرمایہ کاری پر پڑنے والے اثرات کی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔ اس سے قبل دونوں ایوانوں کی کارروائی دوپہر 2 بجے تک ملتوی کر دی گئی۔پارلیمانی امور کے وزیر پرہلاد جوشی نے لوک سبھا میں ایوان کی کارروائی شروع ہونے کے بعد اپوزیشن سے بحث کرنے کی درخواست کی۔ انہوں نے کہا کہ بجٹ اجلاس کی پہلی ترجیح صدر کے خطاب پر بحث کرنا ہے۔ حکومت ہر معاملے پر بات کرنے کو تیار ہے۔ ساتھ ہی پریزائیڈنگ آفیسر راجندر اگروال نے بھی اپوزیشن ارکان سے بحث میں حصہ لینے کی اپیل کی۔ ہنگامہ ہوتا دیکھ کر انہوں نے کارروائی دن بھر کے لیے ملتوی کر دی۔ اسی طرح کی صورتحال راجیہ سبھا میں بھی رہی، اپوزیشن کے رویہ کو دیکھتے ہوئے چیئرمین جگدیپ دھنکھڑ نے کارروائی دن بھر کے لیے ملتوی کر دی۔
کانگریس کے جنرل سکریٹری جئے رام رمیش نے ٹویٹ کیا کہ حکومت ایل آئی سی اور ایس بی آئی اور دیگر عوامی اداروں کے دباو¿ کے تحت کی گئی سرمایہ کاری کی تحقیقات کے مشترکہ اپوزیشن کے مطالبے سے متفق نہیں ہے۔ اس طرح کی سرمایہ کاری کی قدر میں کمی کی وجہ سے آج کروڑوں ہندوستانیوں کی بچت خطرے میں ہے۔ساتھ ہی جے رام رمیش نے اس معاملے پر وزیر اعظم پر الزام لگایا۔ انہوں نے کہا کہ یہ کہنا کہ اڈانی اخلاقی طور پر درست ہیں ان کے وزیر اعظم (وزیر اعظم) کے ذریعہ عاجزی، سادگی اور بڑے دل کی خوبیوں کی تبلیغ کے مترادف ہے۔ یہ ‘پورا پولیٹیکل سائنس’ ہے۔کانگریس صدر نے اپوزیشن کے دیگر قائدین کے ساتھ پارلیمنٹ کے اجلاس کی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا۔ انہوں نے ٹویٹ کرکے اس کی جانکاری دی۔ انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ کے جاری بجٹ اجلاس کی تیاری کے سلسلے میں آج ہم خیال سیاسی جماعتوں کے ساتھ میٹنگ ہوئی تاکہ ہماری حکمت عملی طے کی جا سکے۔ ہم پارلیمنٹ میں عوام کی آواز اٹھانے اور تمام اہم مسائل کو قوم کے سامنے اجاگر کرنے کا عزم رکھتے ہیں۔
کانگریس صدر ملکارجن کھڑگے نے مشترکہ اپوزیشن کی پریس کانفرنس میں کہا کہ اپوزیشن مرکز سے تحقیقات کا مطالبہ کرتی ہے اور انکوائری مشترکہ پارلیمانی کمیٹی یا چیف جسٹس کی نگرانی میں ہونی چاہئے۔ ایل آئی سی، ایس بی آئی اور دیگر قومی بنکوں میں سرمایہ کاری کر کے لوگ کروڑوں روپے کا نقصان کر رہے ہیں۔ حقیقت جاننے کے لیے پارلیمنٹ میں بحث ہونی چاہیے۔کانگریس کے ایم پی مانیکم ٹیگور، لوک سبھا میں بی آر ایس ایم پی نما ناگیشورا راواور اے اے پی ایم پی سنجے سنگھ، لیڈر آف اپوزیشن ملکارجن کھڑگے، شیوسینا ایم پی (ادھو ٹھاکرے دھڑے) پرینکا چترویدی، سی پی آئی (ایم) راجیہ سبھا ایم پی ایلارام کریم، سی پی آئی (ایم) راجیہ سبھا کے ایم پی ڈاکٹر وی شیوداسن نے راجیہ سبھا میں اڈانی مسئلہ پر بحث کا مطالبہ کیا۔اس سے پہلے وزیر اعظم نریندر مودی نے مرکزی وزرائ امت شاہ، راج ناتھ سنگھ، انوراگ ٹھاکر، نرملا سیتارمن، پرہلاد جوشی، پیوش گوئل، نتن گڈکری، کرن رجیجو کے ساتھ پارلیمنٹ میں حکومت کی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کرنے کے لیے میٹنگ کی۔ پارلیمانی امور کے وزیر پرہلاد جوشی نے کہا کہ اپوزیشن کسی بھی موضوع پر بات کر سکتی ہے۔ بجٹ اور صدر مملکت کے خطاب کے حوالے سے تعمیری تجاویز دی جائیں۔ وہ اپوزیشن سے اپیل کرتے ہیں کہ ایوان کو آرام سے چلنے دیا جائے۔دریں اثنا، ایک ایجنسی نے دعوی کیا ہے کہ ریزرو بینک آف انڈیا نے مقامی بینکوں سے اڈانی گروپ کی کمپنیوں، حکومت اور بینکنگ ذرائع سے ان کی خدشات کی تفصیلات طلب کی ہیں۔

Related posts

آزادی کے بعد بہار کے اردو ادبی رسائل

Hamari Duniya

دہلی کانگریس کے نائب صدرعلی مہدی کے آپ میں شامل ہونے پر کانگریس رہنما طارق صدیقی شدید برہم ،مفاد پرستانہ قدم قراردیا

Hamari Duniya

نفرت پھیلانے والوں پرسپریم کورٹ کی سختی کا کوئی اثر نہیں،حکومتیں کان میں تیل ڈال کر سو رہی ہیں

Hamari Duniya