33.1 C
Delhi
May 20, 2024
Hamari Duniya
Breaking News بین الاقوامی خبریں

نئی نویلی نیپال حکومت پر خطرات کے بادل، اتحاد میں شامل پارٹیاں عہدوں کیلئے میں جھگڑ پڑیں

Nepal Prime Minister

کاٹھمنڈو ، یکم فروری۔ نیپال میں صرف ایک ماہ قبل قائم ہونے والی حکمراں اتحاد ٹوٹنے کے دہانے پر پہنچ گئی ہے۔ اتحادی جماعتوں کی جانب سے آئندہ ماہ ہونے والے صدارتی انتخابات کے امیدوار اور وزارت داخلہ پر دعویٰ کرنے کے بعد نہ صرف اعلیٰ رہنماوں کے درمیان اعتماد کا بحران پیدا ہو گیا ہے بلکہ لفظی جنگ بھی شروع ہو گئی ہے۔
الیکشن کمیشن کی جانب سے صدر کے عہدے کے لیے انتخابی تاریخ کے اعلان کے ساتھ ہی حکمراں اتحاد کے حلقوں کے درمیان اختلافات گہرے ہوتے جا رہے ہیں، مشترکہ امیدوار کے انتخاب کوتو چھوڑہی دیں۔ سی پی این-یو ایم ایل کے صدر کے پی شرما اولی، جنہوں نے وزیر اعظم پشپا کمل دہل ’ پرچنڈا‘ کو اس عہدے پر لانے میں سب سے اہم کردار ادا کیا ، دعویٰ کرتے ہیں کہ ان کی پارٹی کا امیدوار صدر کے عہدے کے لیے واحد امیدوار ہونا چاہئے۔
ای ایم ایل – سی پی این کے جنرل سکریٹری شنکر پوکھرل نے کہا کہ حکومت اور حکمران اتحاد کی تشکیل کے وقت یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ وزیر اعظم کا عہدہ سی پی این (موویسٹ سینٹر) کو جائے گا، جبکہ صدر اورپارلیمنٹ ا سپیکر کا عہدہ ای ایم ایل کے پاس جائے گی۔دوسری طرف سی پی این ایمالے کے اس دعوے کو مسترد نہیں کرتا بلکہ اسے قبول کرنے سے بھی گریز کر رہا ہے۔ سی پی این (ماوسٹ سینٹر) کے نائب صدر کرشنا بہادر مہارا کا کہنا ہے کہ جو صورت حال حکومت کی تشکیل کے وقت تھی وہ اب بدل گئی ہے۔ بدلی ہوئی صورتحال میں ہمیں نیا معاہدہ بنا کر آگے بڑھنا ہو گا۔
سی پی این (ماو¿سٹ سینٹر) کے اس فیصلے پر حکمراں حلقہ کے سربراہ اور سب سے بڑی پارٹی سی پی این-ای ایم ایل کے صدر کے پی شرما اولی نے سخت ردعمل کا اظہار کیا ہے۔ پارلیمنٹ سے باہر آتے ہوئے اولی نے صحافیوں کے سوال پر کہا کہ سی پی این-ای ایم ایل کو صدر کا عہدہ دینے سے پہلے اتفاق رائے ہوا تھا ، اس لیے قومی اتفاق رائے اس امیدوار کے نام پر بنے گا جسے ہم تجویز کریں گے۔ کسی دوسرے امیدوار کو قبول کرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔
وزارت داخلہ پر تنازعہ
صدارتی امیدوار کو لے کر حکمراں اتحاد کے درمیان بڑھتے ہوئے اختلافات کے درمیان اتحاد میں تیسری سب سے بڑی پارٹی راشٹریہ سواتنتر پارٹی نے اب وزیر اعظم پر روی لامیچھانے کو دوبارہ وزیر داخلہ مقرر کرنے کے لیے دباو¿ ڈالا ہے۔ شہریت تنازعہ میں سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد وزیر داخلہ کے عہدے سے ہٹائے گئے لامیچھانے دوبارہ شہریت کا سرٹیفکیٹ ملنے کے بعد انہیں وزارت داخلہ میں تعینات کرنے کے لیے اب تک تین بار وزیر اعظم پرچندا سے ملاقات کر چکے ہیں۔ منگل کے روز دہل کے ساتھ ملاقات میں، سوتنتر پارٹی نے وزیر اعظم کو الٹی میٹم دیا اور حکومت چھوڑنے کی دھمکی دی۔ وزیر اعظم سے ملاقات کے بعد راشٹریہ سوتنتر پارٹی کے ترجمان مکل ڈھاکل نے کہا کہ اگر وزیر اعظم ہماری پارٹی کے صدر کو وزارت داخلہ میں دوبارہ تعینات نہیں کرتے ہیں تو ہماری پارٹی حکومت چھوڑ دے گی۔
اس کے جواب میں وزیر اعظم نے وزارت داخلہ کو اپنے پاس رکھنے اور آزاد پارٹی یا کسی دوسرے شخص یا لامچھانے کو دینے سے صاف انکار کر دیا ہے۔ سی پی این (ماوسٹ سینٹر) کی اسٹینڈنگ کمیٹی کی میٹنگ سے باہر آتے ہوئے، وزیر اعظم پرچنڈ نے میڈیا کو بتایا کہ جب تک لامیچھانے پر سپریم کورٹ کے فیصلے کی کاپی نہیں آتی، وزارت داخلہ کسی اور کو نہیں دی جائے گی۔ وزیراعظم نے کہا کہ اتحاد کو بچانے کے لیے آخری دم تک کوششیں جاری رکھیں گے۔

Related posts

وراثت کی تقسیم میں خواتین کے حصہ کو یقینی بنانے کیلئے تحریک چلائے گا مسلم پرسنل لائ بورڈ

Hamari Duniya

ننھے معصوموں کی پرواز، بچوں کی ’آخری خواہش‘ کے ساتھ میں نے اپنا بھی ایک خواب پورا کیا:ڈاکٹر نوہیرا شیخ

Hamari Duniya

مسلمان علماء کی محبت و عظمت اپنے لیے لازم سمجھیں: مولانا انوارالحق قاسمی

Hamari Duniya