14.1 C
Delhi
February 29, 2024
Hamari Duniya
Breaking News قومی خبریں

ہوا کے خراب معیار کا ممبئی کے لوگوں کی صحت پر پڑرہا ہے برا اثر، ڈاکٹروں نے دیا یہ مشورہ

Mumbai pollution

ممبئی، یکم جنوری (ایچ ڈی نیوز)۔
ملک کی مالیاتی راجدھانی ممبئی میں فضائی آلودگی کی وجہ سے پھیپھڑوں کی بڑھتی ہوئی بیماریوں نے تشویش میں اضافہ کر دیا ہے۔ ماہر ڈاکٹروں نے ممبئی والوں کو خاص احتیاط برتنے کا مشورہ دیا ہے۔
کووڈ کے بعد آلودہ ہوا نے زیادہ اثر کیا ہے۔ خاص طور پر بزرگ شہریوں کو فضائی آلودگی سے نمٹنے میں زیادہ محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔ اب بچے بھی اس کا اثر محسوس کر رہے ہیں۔ کووڈ انفیکشن سے پھیپھڑے سب سے زیادہ متاثر ہوئے۔ اب کووِڈ لہر کے خاتمے کے بعد ممبئی میں فضائی آلودگی نے پھیپھڑوں کے امراض کی تشویش میں اضافہ کر دیا ہے۔ ماہرین نے پایا ہے کہ خراب ہوا کا ممبئی والوں کی صحت پر برا اثر پڑتا ہے۔ جب موسم سرد ہو جاتا ہے تو فضا میں گرد و غبار زمین پر جم جاتا ہے۔ آب و ہوا کے اثرات کی وجہ سے مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہوتا ہے۔ سیون اسپتال کی او پی ڈی میں کھانسی اور زکام کے 50 فیصد سے زائد مریض رجسٹرڈ ہوئے ہیں۔ ان میں زیادہ تر بزرگ شہری شامل ہیں۔ ہائی بلڈ پریشر، دمہ، دل کی بیماری، برونکائٹس اور گردے کی بیماری والے بزرگ شہری خاص طور پر ممبئی میں فضائی آلودگی سے متاثر ہیں۔ اگر کھانسی، دمہ یا سی او پی ڈی کی بیماری دائمی ہو تو سرد ماحول میں انفیکشن، گردو غبار اور آلودگی سانس لینے میں دشواری اور مریضوں کے خون میں آکسیجن کی کمی کا باعث بنتی ہے۔ اگر بروقت علاج نہ کیا جائے تو مریض کے ہارٹ فیل ہونے کا خدشہ ہوتا ہے۔ سیون اسپتال کے پروفیسر ڈاکٹر نیلکانت اودھ کا کہنا ہے کہ کووڈ کے دوران شہریوں کے پھیپھڑے سب سے زیادہ متاثر ہوئے۔ اس کی وجہ سے پھیپھڑوں کی قوت مدافعت پہلے ہی کم ہو جاتی ہے۔ سردیوں میں ہوا میں موجود آلودگیوں کو گرم اور مرطوب ہوا نہیں ملتی اس لیے ہوا میں ان کے تحلیل کا عمل سست پڑ جاتا ہے۔ آلودگی پھیلانے والے عناصر صرف ہوا میں ہی رہتے ہیں۔ ممبئی میں بڑھتی ہوئی آبادی کے ساتھ ساتھ مسلسل تعمیراتی کام، گاڑیوں کا دھواں، صنعتی آلودگی، جیواشم ایندھن کے جلانے اور کوڑے کرکٹ کی وجہ سے فضائی آلودگی میں اضافہ ہوا ہے۔ موسم سرما کے درجہ حرارت میں دھوئیں اور دھند کے ساتھ ملی ہوئی ہوا صبح سویرے چہل قدمی کرنے والے شہریوں کے لیے پریشانی کا باعث ہے۔ آلودگی میں اضافہ اس ہوا کو متاثر کرتا ہے جو ہم سانس لیتے ہیں، خاص طور پر بچوں، حاملہ خواتین اور بزرگ شہریوں کے پھیپھڑے۔
ڈاکٹر چیتن جین کے مطابق جسم کے تمام اعضاءپھیپھڑوں کی طرف سے فراہم کی جانے والی آکسیجن پر منحصر ہوتے ہیں۔ اگر ہم آلودہ ہوا میں سانس لیتے ہیں تو اس سے نہ صرف ہمارے پھیپھڑوں بلکہ دیگر اعضاءکو بھی نقصان پہنچتا ہے۔ خراب ہوا الرجک عوارض، دمہ، برونکائٹس، سی او پی ڈی اور کووڈ کے بعد کے حالات کے مریضوں کو خطرے میں ڈال دیتی ہے۔ ڈاکٹر تنوی بھٹ کے مطابق فضائی آلودگی کے جسمانی اور ذہنی صحت پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ فضائی آلودگی میں زہریلے مادے سانس کے انفیکشن سے لے کر دل کی بیماری تک کئی بیماریوں کا باعث بنتے ہیں۔ ایسے شہروں میں رہنے والے لوگ جہاں فضائی آلودگی زیادہ ہوتی ہے ان میں سانس کی بیماریاں ہونے کا امکان زیادہ ہوتا ہے۔
علامات اور روک تھام
فضائی آلودگی کی علامات – آنکھوں میں پانی اور خارش۔ سر درد اور چکر آنا۔ کھانسی – بزرگوں اور بچوں میں سینے کی جکڑن اور گھرگھراہٹ۔ صبح کے وقت آؤٹ ڈور یوگا کرنے سے گریز کریں۔ باہر نکلنے سے پہلے ہوا کا معیار چیک کریں۔ زیادہ آلودگی کے دوران دروازے اور کھڑکیاں بند رکھیں۔ دمہ کے مریضوں کو ایئر پیوریفائر کا استعمال کرنا چاہیے۔ پبلک ٹرانسپورٹ یا برقی گاڑی سے سفر کرنے کی کوشش کریں۔ پرانایام اور سانس لینے کی مشقیں کریں۔ صبح کی سیر سے گریز کریں۔ دمہ کے مریض سفر کرتے وقت اپنے ساتھ انہیلر ضرور رکھیں۔ گرم پانی یا سبز چائے پیئے۔ صبح باہر نکلنے سے گریز کریں۔ چہل قدمی کے لیے شام کا وقت اچھا ہے کیونکہ صبح کے مقابلے میں آلودگی کم ہوتی ہے۔ جن کو دیگر مسائل ہیں وہ گھر میں ورزش کریں۔

Related posts

ڈونلڈ ٹرمپ کی واپسی، 2024میں بھی لڑیں گے صدارتی انتخابات

Hamari Duniya

موجودہ حکومت مسلم دشمنی کی بدترین مثال: مولانا ارشد مدنی

Hamari Duniya

مرحوم پروفیسر ابن کنول کے اہل خانہ سے تعزیت کا اظہار کرنے پہنچے ان کے ہونہار طلباء

Hamari Duniya