33.1 C
Delhi
June 22, 2024
Hamari Duniya
Breaking News قومی خبریں

شعبہ اردو، جامعہ ملیہ اسلامیہ کی پچاس ویں سالگرہ کے موقعے پرمنعقد مذاکرے میں سبکدوش اساتذہ نے پرانی یادوں کو تازہ کردیا

Jamia Urdu Department

نئی ہلی(ایچ ڈی نیوز)۔
شعبہ¿ اردو، جامعہ ملیہ اسلامیہ کی پچاس ویں سال گرہ کے موقعے پر یونیورسٹی کے وسیع انجینئرنگ اینڈ ٹکنالوجی آڈیٹوریم میں باوقار مذاکرے کا انعقاد کیا گیا، جس میں شعبے کے سبکدوش اساتذہ نے اپنے زمانے کی علمی و ادبی سرگرمیوں پر اظہار خیال کرتے ہوئے پرانی یادوں کو بھی تازہ کیا۔ شرکائے مذاکرہ کا استقبال کرتے ہوئے صدر شعبہ پروفیسر احمد محفوظ نے کہا کہ شعبے نے نصف صدی کاسفر مکمل کیا ہے اور اس مذاکرے میں شریک شعبے کے بیشتر سابق اساتذہ اس پورے سفرکے بڑے حصے کے چشم دید گواہ ہیں۔ اس اعتبار سے یہ مذاکرہ نہایت معنی خیز ہوجاتا ہے۔ پروفیسر قاضی عبیدالرحمن ہاشمی نے کہا کہ یہ شعبہ تنویراحمد علوی، گوپی چند نارنگ، شمیم حنفی اور عنوان چشتی جیسے ممتاز ادیب و نقاد کا ورثہ رکھتا ہے۔ مجھے اس شعبے میں استاذ اور صدر شعبہ کی حیثیت سے جو کچھ خدمت کاموقع ملا وہی میری زندگی کا حاصل ہے۔ خصوصاً یو جی سی ، ڈی آر ایس پروجیکٹ لانے میں جو کوششیں میں نے کیں اس پر مجھے خوشی ہے۔ پروفیسر خالد محمود نے کہا کہ اردو کی تدریس میرے لیے محض پیشہ اور منصبی فریضہ نہیں بلکہ میرا من پسند اور دلچسپ مشغلہ ہے۔
صدر شعبہ کی حیثیت سے مجھے تقریباً ایک کروڑ کی مالیت کا ٹیگور پروجیکٹ اور شعبے کا ترجمان، سال نامہ ارمغان جاری کرنے کی سعادت حاصل ہوئی۔ اس کے علاوہ کئی اہم سمیناروں کے انعقاد کا بھی موقع ملا۔ پروفیسر شہناز انجم نے کہا کہ اس شعبے کے اساتذہ نے میری تربیت میں جو کردار ادا کیا ہے وہ ناقابل فراموش ہے۔ چنانچہ میں نے بھی بحیثیت استاذ اور صدر شعبہ طلبا کی علمی و شخصی تربیت اور شعبے کی سرگرمیوں میں پوری تندہی کے ساتھ حصہ لینے کی کوشش کی۔ خصوصاً طلبا تنظیم ”بزم جامعہ“ سے مجھے گہری دلچسپی رہی۔ پروفیسر وہاج الدین علوی نے کہا کہ اس شعبے کی مجموعی فضا ابتدا سے ہی نہایت علمی و ادبی رہی ہے اور اپنے بزرگوں کی صحبت سے میں نے بھرپور فیض حاصل کیا۔ بطور خاص میں نے ڈی آر ایس کے تیسرے مرحلے کے تحت قصیدہ، مرثیہ ، مثنوی اور داستان کے حوالے سے چار اہم سمینار منعقد کیے اور اسی پروجیکٹ کے تحت ایک کتاب ’قصیدے کی شعریات‘ بھی شائع کی۔ پروفیسر شہپر رسول نے کہا کہ میں جو کچھ ہوں اس میں شعبہ¿ اردو کا بہت اہم حصہ ہے۔ مجھے فخر ہوتا ہے کہ دنیا بھر میں ہمارے طلبا اہم عہدوں پر فائز ہو کر اہم خدمت انجام دے رہے ہیں۔شعبہ¿ اردومیں طلبا کی تحریری صلاحیتوں کو فروغ دینے کے لیے میں نے ’ہم سخن‘ (وال میگزین) جاری کرنے کی تجویز پیش کی جسے اس وقت کے صدر شعبہ عنوان چشتی نے بہت پسند کیا۔ ڈاکٹر سہیل احمد فاروقی نے کہا کہ انسانی زندگی میں مخلص دوستوں کااہم کردار ہوتا ہے۔ میں خوش قسمت ہوں کہ اس شعبے نے مجھے یہ عظیم نعمت عطا کی۔

محبت اور رواداری کی فضا اس شعبے کی امتیازی خصوصیت رہی ہے۔ اس پروگرام کے کنوینر پروفیسر ندیم احمد نے پروگرام کی کامیابی پر مسرت کا اظہار کیا۔ اس موقعے پر انجینئرنگ اینڈ ٹکنالوجی آڈیٹوریم کے وسیع ہال میں حاضرین کی بڑی تھی۔ اس مذاکرے میں شعبے کے استاذ پروفیسر محمد ذاکر، پروفیسر شمس الحق عثمانی، پروفیسر عبدالرشیدکی شرکت طبیعت کی ناسازی کے سبب نہیں ہوسکی۔ اس مذاکرے کی نظامت کے فرائض شعبہ¿ اردو، جامعہ ملیہ اسلامیہ سے فارغ اور شعبہ¿ اردو ، مانو کیمپس لکھنو¿ کے اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر عمیر منظر نے انجام دیے۔

Related posts

مدنی انٹرکالج کا تعلیمی وثقافتی مظاہرہ اختتام پذیر، رکن اسمبلی وریندر چودھری نے طلبا کی حوصلہ افزائی کی

Hamari Duniya

ایک گاؤں ایسا بھی: شام ہوتے ہی سوئچ آف ہو جاتے ہیں ٹی وی اور موبائل

Hamari Duniya

جمعہ سے دہلی میں شروع ہورہا ہے انڈیا۔ آسٹریلیا کے درمیان دوسرا ٹسٹ،چتیشور پجارا 100 واں ٹیسٹ کھیلنے کیلئے پرجوش

Hamari Duniya