31.7 C
Delhi
May 24, 2024
Hamari Duniya
Breaking News قومی خبریں

آپ کتنے ظالم ہیں! آپ اقلیت لفظ بھی نہیں بول سکتے:انڈین یونین مسلم لیگ کے رکن پارلیمنٹ ای ٹی محمد بشیر نے اقلیتوں کے مسائل کو اٹھایا

ET Basheer

نئی دہلی ،09فروری(ایچ ڈی نیوز)۔
انڈین یونین مسلم لیگ (آئی یو ایم ایل ) کے رکن پارلیمان ای ٹی محمد بشیر ( پننانی ) کیرلا نے کل پارلیمنٹ میں صدر کے خطاب کے بعد اپنی تقریر میں اقلیتوں کے اہم مسائل پر آواز اٹھایا۔ ای ٹی محمد بشیر نے اپنی تقریر میں کہا کہ صدرجمہوریہ ہند کی تقریر کے پہلے حصے میں، انہوں نے یہ دعویٰ کیا ہے کہ وہ ایک ایسے بھارت کے لیے کھڑے ہیں جس کا تنوع اور بھی زیادہ واضح ہے اور جس کا اتحاد اور بھی غیر متزلزل ہے۔ جناب مجھے یہ کہتے ہوئے افسوس ہو رہا ہے۔آپ کے بیان کا سچائی سے کوئی تعلق نہیں۔ یہ اس نئے سال کے پہلے حصے کا تماشا ہے۔
جناب، برصغیر پاک و ہند میں 100 سے زیادہ زبانیں ہیں اور 700 سے زیادہ مختلف قبائل ہیں۔ ہندوستان میں ہر بڑے مذہب کی اپنی جڑیں ہیں۔ دنیا کے کچھ بڑے شہر بھی ہندوستان میں ہی ہیں۔ یہاں تک کہ وہ دور دراز مقامات جہاں لوگ نہیں رہ رہے ہیں وہ بھی ہندوستان میں ہے۔یہ تنوع ہمارا حسن ہے۔میں آپ سے ایک سوال پوچھ رہا ہوں۔ میں نے صدر کی تقریر کے 19 صفحات کو احتیاط سے مطالعہ کیا ہے۔ اس تقریر میں آپ نے مقامات، مذاہب، ذات پات، مسلک وغیرہ کا ذکر کیا ہے، بدقسمتی سے اس حکومت نے لفظ’اقلیتوں‘ کا استعمال بھی نہیں کیا۔آپ کتنے ظالم ہیں! آپ نے یہ لفظ کیوں نہیں استعمال کیا؟ نہ صرف اس تقریر میں بلکہ بجٹ تقریر میں بھی اس کا استعمال نہیں کیا گیا۔ جہاں تک اقلیتوں کا تعلق ہے یہ حکومت زیرو ٹالرینس کا مظاہرہ کر رہی ہے۔ آپ ہندوستان کے ورثے کی بات کر رہے ہیں۔ میں آپ سے پوری شائستگی کے ساتھ پوچھ رہا ہوں کہ آیاآپ ورثے کے اصل معنی جانتے ہیں۔ آپ کو ہندوستان کے صحیح ورثے کا احساس کرنا ہوگا۔ آپ کو یہ سمجھنا ہوگا کہ ہندوستان کی ایک جامع ثقافت ہے۔ ہر معاملے میں ہم دیکھ سکتے ہیں کہ آپ نصابی کتابوں میں تحریف کر رہے ہیں۔ آپ تحریک آزادی کو مسخ کر رہے ہیں اور اس قسم کی باتیں لگاتارہوتی آر رہی ہیں۔ یہ حکومت ہمیشہ دوہرا معیار اپنا رہی ہے۔ میں آپ کو سلور اسکرین سے دو مثالیں دوں گا۔ پہلی مثال کشمیر فائلز نامی فلم ہے۔ ہندوستانی حکومت نے اس فلم کو بین الاقوامی فلم فیسٹیول میں شامل کرنے کا مشورہ دیا۔ اس کمیٹی کے جیوری نے کہا کہ یہ برا ہے اور ساتھ ہی انہوں نے یہاں تک کہا کہ یہ مارکیٹ پر مبنی ہے۔اور یہ فحاشی ہے. آپ نے اس فلم کی حوصلہ افزائی کیوں کی؟ وزیراعظم نے اس کی حوصلہ افزائی کی۔ وہ اس فلم کے لیے بہت زیادہ ترغیب دے رہے تھے کیونکہ اس سے اسلام فوبیا پھیل رہا تھا۔ وہ موضوع تھا جس کی وجہ سے آپ نے اسے پسند کیا۔
دوسرا ، بی بی سی کا انکشاف ہے، اس میںکیا تھا؟ اس میں گجرات فسادات پر بات ہو رہی تھی۔ہم سب جانتے ہیں کہ بی بی سی کی اس دستاویزی فلم کو دیکھنے کے لیے بھی طلبہ کو گرفتار کیا گیا اور وہ ابھی تک جیل میں ہیں۔ ہمیں گجرات معاملے میں اس طرح کے دوہرے معیار کو سمجھنا اور بہت محتاط رہنا ہوگا۔ دو نامور لیڈر ہیں، تیستا سیتلواڑ اور آر بی سری کمار۔ آر بی سری کمار ایک سینئر پولیس افسر تھے اور تیستا سیتلواڑ ایک انسان دوست ہیں کارکن ہیں اور وہ انسانوں کی فلاح و بہبود کے لیے سخت محنت کر رہی تھیں۔ لیکن کیا ہوا؟ آپ نے ان کے ساتھ کیا کیا ہے؟وہ جیل میں ہیں۔ گجرات حکومت پر تنقید کرنے والوں کو سلاخوں کے پیچھے ڈال دیا گیا۔ اس کے ساتھ ہی بلقیس بانو کے کیس میں کیا ہوا؟ بلقیس بانو کیس کے اصل مجرم جیل سے رہا ہو گئے۔ اس لیے میں کہہ رہا ہوں کہ آپ اس قسم کا دوہرا معیار اختیار کر رہے ہیں۔ بلقیس بانو کے ساتھ زیادتی اور دیگر تمام ظالمانہ کام کیے گئے۔ عدالت نے حکم نامہ جاری کر دیا اور آخر کار بغیر کسی جواز کے آپ نے مجرموں کو جیل سے باہر جانے کی اجازت دے دی۔ اس لیے، میں کہہ رہا ہوں کہ آپ ایک مختلف موقف اختیار کر رہے ہیں۔جناب صدر کی تقریر میں آپ نے فرمایا:آج ایک طرف ایودھیا دھام کی تعمیر ہو رہی ہے اور دوسری طرف ملک میں جدید پارلیمنٹ ہا¶س بھی بنایا جا رہا ہے۔
جناب میں یہ بات کر رہا ہوں کہ یہ حکومت کیا کر رہی ہے۔ میں ایودھیا کے بارے میں کچھ نہیں کہہ رہا ہوں۔ میں آپ سے ایک بات پوچھ رہا ہوں۔ 1991 میں، اس معزز ایوان نے ہندوستان میں عبادت گاہوں کے حوالے سے ایک قانون پاس کیا۔ اس ایکٹ کا مقصد کیا تھا؟ اس ایکٹ کا مقصد 15 اگست 1947 کے بعد ہندوستان میں عبادت گاہوں پر کسی قسم کا تنازعہ پیدا کرنا نہیں تھا۔ عبادت گاہوں کی حیثیت کو تبدیل نہیں کیا جائے گا اور یہ جوں کا توں رہے گا۔ یہ اس قانون سازی کا مقصد تھا، اب کیا ہو رہا ہے؟ آپ اس قانون کو کمزور کر رہے ہیں۔ اس قانون سازی کا مقصد کیا تھا؟ یہ ایک وژن کے ساتھ کیا گیا تھا تاکہ کل کوئی کسی خاص عبادت گاہ پر کسی قسم کا اعتراض یا حق جتا سکے ، لیکن آپ اسے بگاڑ رہے ہیں۔ آپ اس ایکٹ کو منسوخ کر رہے ہیں۔ مجھے یہ کہتے ہوئے افسوس ہو رہا ہے کہ آپ اس ملک میں بہت زیادہ جھگڑے کر رہے ہیں۔جناب ۔قلیتوں کے حوالے سے میں آپ سے ایک سوال پوچھ رہا ہوں۔ آپ ہم سے نفرت کیوں کریں؟ ہم اس سرزمین میں پیدا ہوئے۔ ہمیں اسی سرزمین میں جینا ہے اور اسی سرزمین میں مرنا ہے۔ آپ اقلیتوں سے اس قسم کی دشمنی کیوں دکھاتے ہیں؟ آپ انہیں جارح کہتے ہ، آپ انہیں ملک دشمن کہتے ہیں۔
وہ ملک دشمن ہیں۔ بہت سے بے گناہ لوگوں کو جیلوں میں ڈالا جاتا ہے۔ آپ انہیں انتہا پسند کہتے ہیں… (مداخلت)
عزت مآب چیئرپرسن (شری بھرتروہری مہتاب): آپ نے مقررہ وقت پہلے ہی عبور کر لیا ہے۔شری ای ٹی محمد بشیر (پونانی): سر، ایک منٹ۔ آپ نے ہمیشہ میرے ساتھ ہمدردانہ سلوک کیا۔ آپ ان کو گائے ذبح کرنے والے کہتے ہیںلو جہادی، سرکاری زمینوں پر ناجائز قابضین وغیرہ کہتے ہیں۔ آپ ان کے خلاف بلڈوزر استعمال کر رہے ہیں۔ اس طرح کا قتل عام جاری ہے۔ آپ کی حکومت کی سیاسی تجربہ گاہ نفرت انگیز تقاریر کی تیاری پر کام کر رہی ہے۔ ملک بھر میں نفرت انگیز تقاریر کی جا رہی ہیں۔ اسی وقت، آپ قانون بنا رہے ہیں.کس لیے؟ یہ صرف مشکلات پیدا کرنے کے لیے ہے۔ مختلف ریاستوں میں مختلف قانون سازی کی جا رہی ہے۔ یہ صرف اس ملک میں ہم آہنگی کو خراب کرنا ہے۔آخر میں ایک بات پوچھنا چاہوں گا۔ آپ مسلم کمیونٹی کو کیوں داغدار کریں، ایک ایسی کمیونٹی جس نے قومی آزادی کی جدوجہد میں، قومی ترقی کے پروگراموں میں، اس سرزمین کی ثقافت کو ترقی دینے میں زبردست تعاون دیا ہے۔ ان تمام شعبوں میں آپ مسلم کمیونٹی کا شاندار تعاون اور شراکت دیکھ سکتے ہیں۔ آپ ان سے نفرت کیوں کریں؟ اس کے پیچھے کیا منطق ہے؟ آپ اقلیتوں پر ظلم کر رہے ہو۔کیا آپ ہندوستان کو اقلیتی مکت ہندوستان بنا رہے ہیں؟ مجھے لگتا ہے کہ یہ آپ کا خواب ہے۔ یاد رہے کہ ہندوستان کسی کی وراثتی جائیداد نہیں ہے۔جناب، شری کیلاش ستیارتھی، 2004 میں امن کے نوبل انعام یافتہ نے کہا اور میں اسے دہر ا رہا ہوں ۔’ہندوستان 100 مسائل کی سرزمین ہے، لیکن اربوں حل کی ماں ہے۔‘ میری آپ سے گزارش ہے کہ اس پر غور کریں اور اقلیتوں کے خلاف اس قسم کے ظالمانہ رویہ سے باز آجائیں۔ شکریہ

Related posts

جمعیۃ علمائ ہند نے ’بے قصور لوگوں کی زندگی کو جہنم بننے سے بچایا

Hamari Duniya

AMP creates history, organises the country’s biggest talent search exam across 300+ districts of the Country

Hamari Duniya

ایم سی ڈی میں کانگریس کی جیت یقینی، بنائیں گے چمکتی ہوئی دہلی

Hamari Duniya