33.1 C
Delhi
June 15, 2024
Hamari Duniya
Breaking News دہلی

غریبوں کے حق کو ’مفت کی ریوڑی‘ کہنے پرمرکزی حکومت پر برس پڑے نائب وزیراعلیٰ

نئی دہلی:عام آدمی پارٹی کی دہلی حکومت کے ذریعہ بنائی گئی اسکیموں کی وجہ سے بی جے پی اور وزیراعظم نریندر مودی کی حکومت کی نینداڑی ہوئی ہے۔مرکزی حکومت کی کوشش رہتی ہے کہ وہ ایل جی کے حقوق کا استعمال کرکے کیجریوال حکومت کی بنائی ہوئی اسکیموں میں روڑے ڈال کر اس کو روکوا دے اور اس میں وہ کافی حد تک کامیاب بھی رہی ہے۔ لیکن کچھ اسکیمیں ایسی بھی ہیں جس کو مرکزی حکومت چاہ کر بھی نہیں رکواسکی۔اور اس طرح کی اسکیموں کو عوام کی جانب سے کافی پذیرائی بھی مل رہی ہے اور دہلی کے وزیراعلیٰ کے مقبولیت میں اضافہ بھی ہورہا ہے۔اب دہلی حکومت ان اسکیموں کو ’مفت کی ریوڑی‘کہہ کر عوام میں کیجریوال اور ان کی حکومت کو بدنام کررہی ہے۔ آج کل وزیراعظم نریندر مودی اپنے ہر اسپیچ میں ’مفت کی ریوڑی کہنا نہیںبھولتے ہیں۔لیکن عام آدمی پارٹی بھی وزیراعظم کا زبردست کاو¿نٹر کررہی ہے۔آج دہلی کے نائب وزیر اعلیٰ منیش سسودیا نے ایک پریس کانفرنس کے ذریعے بھارتیہ جنتا پارٹی کے’ دوست وادی‘ ماڈل کی تنقید کی۔ انہوں نے کہا کہ آج بی جے پی ملک میں عوام کی فلاح و بہبود کے لئے چل رہی اسکیموں کو مفت کی ریوڑی کہہ کر عام لوگوں کا مذاق اڑانے کی سیاست کر رہی ہے۔ ایک اور جہاں بی جے پی دوستیوادی کے ماڈل پر چلتے ہوئے اپنے دوستوں کے لاکھوں کروڑوں کے ٹیکس اور قرض معاف کر رہی ہے، وہیں وہ ملک کے کروڑوں لوگوں کے لیے دستیاب عوامی بہبود کی اسکیموں کو مفت ریوڑی بتا رہی ہے۔

بی جے پی کے مطابق اپنے دوستوں کے لاکھوں کروڑوں کے ٹیکس اور قرض معاف کرنے کی وجہ سے ملک ترقی کر رہا ہے۔ تعلیم اور صحت سمیت بنیادی ضروریات جو عوام کو عوام کے ٹیکس کے پیسوں سے ملتی ہیں وہ مفت ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن جی نے ملک کے لوگوں کو ڈرانے کی کوشش کی ہے۔ ان کے بقول اگر عوام الناس کے لیے عوامی فلاح و بہبود کے منصوبے جاری رہے تو ملک برباد ہو جائے گا۔ نائب وزیر اعلیٰ منیش سسودیا نے کہا کہ آج ملک کے سامنے حکمرانی کے دو ماڈل ہیں۔ پہلا ماڈل دوستی وادی کا ماڈل ہے، جہاں اقتدار میں بیٹھے بی جے پی کے لوگ اپنے خاندان اور دوستوں کی مدد کرتے ہیں۔ اس میں بی جے پی نے اپنے چند دوستوں کے لاکھوں کروڑوں روپے کے ٹیکس اور قرض معاف کر کے اسے ترقی کا نام دیا ہے۔ دوسری طرف ایک ماڈل ہے جہاں عوام کے ٹیکس کا پیسہ اچھے سرکاری اسکولوں، ہسپتالوں، ضروری ادویات کا بندوبست کرنے، عوام کو بجلی اور پانی جیسی بنیادی سہولتیں مفت فراہم کرنے، بزرگوں کو یاترا کی سعادت حاصل کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ ان کو پینشن دینا، خواتین کو بسیں دینا، مفت سفر کی سہولت دینا۔یعنی پہلے ماڈل میں عوام کے ٹیکس کا پیسہ منتخب دوستوں کے ٹیکس اور قرضے معاف کرنے کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے اور دوسرے ماڈل میں عوام کے ٹیکس کا پیسہ کروڑوں لوگوں کی فلاح و بہبود کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔ نائب وزیر اعلیٰ منیش سسودیا نے کہا کہ بی جے پی کے دوستی وادی کے ماڈل میں 5 لاکھ کروڑ روپے کے ٹیکس اور ان کے دوستوں اور رشتہ داروں کے 14 لاکھ کروڑ روپے کے قرض معاف کر دیے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن جی کو دیکھنا چاہئے کہ دوستی کا یہ ماڈل عام لوگوں پر کس طرح اثر انداز ہوتا ہے۔انہوں نے کہا کہ آج ملک میں اگر کوئی کسان اپنے قرض کی قسط ادا کرنے سے قاصر ہے تو عوام دوست ماڈل کی حکومت اور اس کے لوگ اس کسان کے گھر جا کر اس کی زمین چھین لیتے ہیں، اسے منسلک کر دیتے ہیں۔ یہ دوستانہ ماڈل چند لوگوں کے لاکھوں کروڑوں روپے کے ٹیکس اور قرضے آسانی سے معاف کر دیتا ہے، لیکن کسانوں کی قسطیں معاف نہیں ہوتیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ دوست ماڈل کی حکومت کاغذ پر مفت تعلیم دینے کی کتنی ہی بات کرے لیکن زمین پر اس پر یقین نہیں رکھتی۔ فرینڈلی ماڈل کا ماننا ہے کہ سرکاری اسکولوں کو اتنا خراب اور خراب کر دیں کہ لوگ اپنے بچوں کو پرائیویٹ اسکولوں میں بھیجنے پر مجبور ہو جائیں اور اگر کوئی والدین کسی مجبوری کے تحت اپنے بچے کی 1 ماہ کی فیس ادا نہیں کر پاتے ہیں تو ان کا بچہ کتنا ہی باصلاحیت کیوں نہ ہو، دوستانہ ماڈل اسے اسکول چھوڑنے پر مجبور کر دیتی ہے، اس کے لیے اسکول کے دروازے بند کر دیتی ہے۔ نائب وزیر اعلیٰ نے کہا کہ دوستانہ ماڈل سرکاری اسپتالوں کو بہتر کرنے میں یقین نہیں رکھتا۔ یہی وجہ ہے کہ ملک بھر کے سرکاری اسپتالوں کی حالت زار ہے اور لوگ علاج کے لیے نجی اسپتالوں میں جانے پر مجبور ہیں، جہاں انہیں بھاری فیسیں ادا کرنی پڑتی ہیں۔ دوسری طرف عام آدمی کو اپنا ٹیکس ادا کرنا پڑتا ہے۔ پیسوں سے بہتر علاج اور دوائیں مفت ملیں تو دوستانہ ماڈل کے لوگ اسے مفت ریوڑیوں کی تقسیم کہتے ہیں۔ جبکہ اپنے دوستوں کے 5 لاکھ کروڑ کے ٹیکس اور 14 لاکھ کروڑ کے قرضے معاف کرنا ان کے لیے مفت ریوڑی نہیں ہے۔

Related posts

ایرانی پاسداران انقلاب کے سربراہ کے اس دعویٰ سے اسرائیل کی نیند اڑجائے گی

Hamari Duniya

دھرمیندر کو سنی دیول کے ساتھ چھٹیاں گزارتے ہوئے دیکھا گیا۔

Hamari Duniya News

شعبہ اردو، جامعہ ملیہ اسلامیہ کی پچاس ویں سالگرہ کے موقعے پرمنعقد مذاکرے میں سبکدوش اساتذہ نے پرانی یادوں کو تازہ کردیا

Hamari Duniya