33.1 C
Delhi
June 15, 2024
Hamari Duniya
Breaking News مضامین

تم اس قوم سے تاریخ کے معمار نہ مانگو!

Maulana Abul Kalam Azad
مجاہد عالم ندوی
مجاہد عالم ندوی

مجاہد عالم ندوی

استاد : ٹائمس انٹرنیشنل اسکول محمد پور ، شاہ گنج پٹنہ
رابطہ نمبر : 8429816993

بچے ہر گھر کی رونق ہوتے ہیں یہ گھر میں ایک پل کے لیے بھی نہ ہوں تو گھر س±ونا اور ویران لگنے لگتا ہے ، دنیا میں جہاں بہت سے عالمی دن منائے جاتے ہیں ، من کے سچے ، والدین کے دلوں کی دھڑکن اور آنکھوں کے تاروں کے لیے بھی ایک دن مخصوص کیا گیا ، اور وہ دن بچوں کا عالمی دن کہلاتا ہے۔پنڈت جواہر لال نہرو ہندوستان کی جنگ آزادی کے اہم قائدین اور رہنماو¿ں میں شامل رہے اور ملک کی آزادی کے بعد پہلے وزیر اعظم منتخب ہوئے ، وہ بیک وقت مفکر ، مو¿رخ ، دانشور ، سیاست داں ہونے کے ساتھ ساتھ ایک کامیاب ادیب بھی تھے۔
جواہر لال نہرو کو بچوں سے بے پناہ پیار تھا ، انہوں نے اپنے یوم پیدائش کو ? بچوں کے دن ، کے طور پر منانے کا اعلان کیا ، اور یوں ان کے دور سے ملک بھر میں ہر سال چودہ (14) نومبر کو یوم اطفال کے طور پر منایا جاتا ہے، جسے بال دیوس اور چلڈرنس ڈے بھی کہا جاتا ہے ، یوم اطفال عالمی سطح پر بھی منایا جاتا ہے۔ دنیا کے مختلف ممالک میں مختلف تاریخوں کو مختلف انداز سے یہ دن منایا جاتا ہے۔
اس دن کے منانے کا مقصد بچوں کا حوصلہ بڑھانا ہے ، ان کی عزت افزائی اور ان کے حقوق کی پاسداری ہے۔یوم اطفال منانے کا مقصد بچوں میں تعلیم ، صحت ، تفریح اور ذہنی تربیت کے حوالے سے شعور و آگہی کو اجاگر کرتا ہے ، تاکہ مستقبل میں یہ بچے ملک کے بہترین نمونہ اور وفادار شہری ثابت ہو سکیں۔بچے مستقبل کے معمار اور قیمتی سرمایہ ہوتے ہیں اگر انہیں مناسب تعلیم دی جائے اور ان کی صحیح تربیت کی جائے تو اس کے نتیجے میں ایک اچھا اور خوشگوار معاشرہ تشکیل پاتا ہے۔
یہ حقیقت ہے کہ انسان کا چھوٹا سا بچہ بھی قدرت کا عجب کرشمہ ہے ، اس کی بھولی بھالی شخصیت میں کتنی کشش اور جاذبیت ہوتی ہے ، اس کی معصوم ادائیں ، اس کی شرارتیں ، اس کا کھیل کود ، غرض اس کی کون سی ادا ہے جو دل کو لبھاتی اور کیف و سرور سے نہ بھر دیتی ہو۔پھر ایک اور پہلو سے دیکھیے ہمیں نہیں معلوم کہ قدرت نے کس بچہ میں کتنی اور کس قسم کی صلاحیتیں رکھ دی ہیں ، اور آگے چل کر کیا خدمات یا کارنامے انجام دینے والا ہے ، ہو سکتا ہے کہ آج ان معصوموں میں کوئی کسان اور تاجر ہو ، کوئی انجنیئر اور صنعت کار ہو ، کوئی صحافی ہو ، کوئی طبیب و حکیم ہو ، کوئی مدرس ہو ، کوئی سائنس داں ، کوئی فلسفی ہو اور کوئی ماہر سیاست اور مدبر و منتظم ہو ، ابھی کچھ نہیں کہا جا سکتا ہے کہ خاندان ، قبیلہ ، قوم ، ملک اور نوع انسانی ان میں سے کس کے ذریعہ کتنا بڑا فائدہ پہنچے گا ، اتنی بڑی صلاحیتیں جس بچہ کے اندر چھپی ہوئی ہیں وہ اپنی پیدائش کے وقت سب سے زیادہ کمزور اور بےبس ہوتا ہے۔
وہ اپنی نشو ونما اور پرورش کے لیے جتنی توجہ ، شفقت اور محبت کا طالب ہے ، کسی بھی خاندان کا بچہ اتنی توجہ اور محبت نہیں چاہتا ، ذرا سی بے احتیاطی سے اس کی زندگی ہی کو خطرہ لاحق ہو سکتا ہے ، اس کی ذہنی و فکری اور اخلاقی تربیت تو اس سے بھی زیادہ پیچیدہ اور مشکل کام ہے ، اس معاملے میں غلطی و کوتاہی اسے بالکل غلط رخ پر لے جا سکتی ہے ، اور اس کا وجود پورے سماج کے لیے عذاب بن سکتا ہے ، اگر صحیح نہج پر اس کی تربیت ہو سکے تو وہ سماج کو امن و چین اور سکون سے بھر سکتا ہے۔تربیت مستقل ایک فن ہے ، اگر کوئی شخص یہ چاہتا ہے کہ اس کے ذریعہ تیار کردہ سانچے میں کسی کا ذہن و دماغ ڈھل جائے اور خاص طور پر اس کی اپنی اولاد کا اور خود اس کے زیر پرورش بچوں کا ، تو یقینی طور پر اس کو یہ کرنا ہوگا کہ وہ ان کے ایام طفولیت کو زیادہ اہمیت دے۔بچوں کے جسم و جان اور ان کی طبیعت و مزاج کو گندھی ہوئی مٹی سے تشبیہ دی جاتی ہے کہ کمہار اچھی طرح گندھی ہوئی مٹی کو جس طرح کے ظروف کی شکل دینا چاہتا ہے ، آسانی سے مطلوبہ شکل و صورت دے دیتا ہے۔
بچوں کا اچھا یا برا ہونا اس بات پر منحصر ہے کہ ان کی تعلیم و تربیت صحیح طرح سے ہوئی ہے یا غلط انداز سے۔ صرف رسمی طور پر ایک دن یوم اطفال منا کر اس عظیم ذمہ داری اور فرض کو کبھی پورا نہیں کیا جا سکتا ہے ، اس کے لیے ہر دن کے چوبیس گھنٹے صرف کرنا پڑے گا ، یوم اطفال کا پیغام یہ ہے کہ ہم عہد کریں کہ ہم اپنے بچے کی ذہنی و فکری تربیت کریں گے ، ان کے لیے مناسب تعلیم کا نظم کریں گے اور ساتھ ہی ساتھ جسمانی اور روحانی بالیدگی کی بھی فکر کریں گے۔
آئیں! آج ہم سب مل کر اپنے مستقبل کے معماروں ، رہنماو¿ں اور سرمایہ داروں کو خراج تحسین پیش کریں ، اور آج کے دن کی مبارکبادی انہیں پیش کریں ، بچوں سے نفرت و حسد کرنے کی بجائے ان سے محبت کریں ، آج کے دن ان بچوں کے لیے خدا سے خاص دعا کریں کہ اللّٰہ تعالٰی انہیں ہمیشہ اپنی پناہ و حفاظت میں رکھے ، ہر مشکل و مصیبت شیطان کے برے منصوبوں سے انہیں بچائے رکھے ، ان کی ذہنی صلاحیتوں کو بڑھائے ، دل و دماغ کو فرحت اور تازگی بخشے ، تعلیم یافتہ اور کامیاب انسان بنائے ، آمین!

Related posts

اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو نے سعودی عرب سےمتعلق کیا اعلان کہ ہنگامہ برپا ہونا طے

Hamari Duniya

امریکی صدرجو بائیڈن ایک تقریب کے دوران اسٹیج پرہی گرگئے

Hamari Duniya

عالمی کپ 2022 میں پاکستان کے خلاف کھیلی گئی اننگ کو نہیں بھول پارہے ہیں کوہلی

Hamari Duniya