33.1 C
Delhi
July 15, 2024
Hamari Duniya
Breaking News قومی خبریں

یوم آزادی کے موقع پر300سے زائد تنظیموں اور چینج میکرس کو اے،ایم ،پی نیشنل ایوارڈ سے نوازا گیا

AMP

نئی دہلی(ایچ ڈی بیورو)۔
15اگست 2022کو دوسرا اے، ایم، پی نیشنل ایوارڈز فار سوشل ایکسیلنس (این اے ایس ای) 2022 کے فاتحین کا اعلان ایک بڑے اجتماع والی تقریب میں کیا گیا۔ 2000 سے زیادہ این جی اوز اور افراد کو اس ایوارڈ کے لیے نامزد کیا گیا تھا، جن میں سے تقریباً 302 کو مختلف ایوارڈز کے لیے شارٹ لسٹ کیا گیا۔ مولانا ارشد مدنی، معروف اسلامی اسکالر اور پرنسپل – دارالعلوم دیوبند کو، بلا تفریق مذہب و ملت ملک کے لوگوں کی فلاح و بہبود کے لیے ان کی بے پناہ خدمات کے لیے لائف ٹائم اچیومنٹ ایوارڈ پیش کیا گیا. 14 قومی سطح کی این جی اوز اور 82 ریاستی سطح کی این جی اوز کو بہترین این جی او کا ایوارڈ دیا گیا۔ مختلف ریاستوں کی 88 این جی اوز جنہوں نے اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا لیکن بہترین این جی اوز کی فہرست میں جگہ نہ بنا سکے انہیں خصوصی جیوری ایوارڈ سے نوازا گیا۔
درج ذیل این جی اوز(تنظیمیں) ہیں جنہیں بہترین این جی او کا ایوارڈ دیا گیا:الامین مشن، ایسوسی ایشن آف مسلم ڈاکٹرز (اے ایم ڈی)، ہمدرد نیشنل فاو¿نڈیشن، ہیومن ویلفیئر فاو¿نڈیشن، اسلامک سینٹر آف انڈیا، عیسیٰ فاو¿نڈیشن، جمعیت اوپن اسکول (جمعیت علماءہند)، ملت فاو¿نڈیشن فار ایجوکیشن ریسرچ اینڈ ڈیولپمنٹ (ایم ایف ای آر ڈی)، جدید تعلیمی سماجی اور ثقافتی تنظیم (ایم ای ایس سی او)، رحمان فاو¿نڈیشن۔ سہایاتا ٹرسٹ، سوسائٹی فار برائٹ فیوچر (ایس بی ایف)، زکوٰة فاو¿نڈیشن آف انڈیا۔
تنظیموں کے علاوہ 110 افراد کو بھی ایوارڈز سے نوازا گیا۔ یہ وہ ہستیاں ہیں جنہوں نے اپنی ذاتی اور سماجی حدوں سے آگے بڑھ کر پسماندہ افراد کی زندگیوں میں تبدیلی پیدا کی۔ کچھ قابل ذکر تبدیلی ساز جن کو اعزاز سے نوازا گیا ہے وہ ہیں۔ڈاکٹر روحا شاداب، پروفیسر فرزانہ مہدی، ڈاکٹر اقصیٰ شیخ، محمد عتیق صاحب، رفعت جاوید، عالیشان جعفری، عصمت آرا، خالدہ پروین، خوشبو خان۔
سید سعادت اللہ حسینی، صدر، جماعت اسلامی ہند اور تقریب کے مہمان خصوصی نے کہا کہ ہمیں قرآن اور پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیمات کی پیروی کرتے ہوئے بلا تفریق ذات پات، مسلک اور سب کی فلاح و بہبود کے لیے کام کرنا چاہیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں لوگوں کے مسائل کے حل میں تخلیقی صلاحیتوں اور اختراعات کو لانے کی ضرورت ہے تاکہ ہم کم وسائل کے ساتھ اور تیزی سے تبدیلی کے وقت میں اس کے فوائد کو ا?بادی کے ایک بڑے حصے تک پہنچا سکیں۔
ڈاکٹر فرح عثمانی، بین الاقوامی صحت اور ترقی کی ماہر اور بانی – رائزنگ بیونڈ دی سیلنگ جو ہندوستان میں صنفی تعصبات کو دور کرنے کے لیے کام کرتی ہیں اور خواتین کو کامیابی حاصل کرنے والی خواتین کو منظرعام پرلانے کے لیے کام کرتی ہیں، نے کہا کہ “خواتین کو صرف ایک سرپرست یا مدد کی ضرورت ہے تاکہ ان کی حوصلہ افزائی کی جا سکے۔ ہمیں صرف ان کو سماجی بہبود کی مختلف کوششوں میں شامل کرنے کی ضرورت ہے اور وہ خاندان اور معاشرے کی ترقی میں اہم کردار ادا کر سکیں گے۔”
عامر ادریسی، صدراے ایم پی نے اپنے کلیدی خطاب میں کہا کہ ’بہترین کام کرنے والی این جی اوز، اورچینجز میکرس کو اعزاز دینے کی بنیادی وجہ ان تک پہنچنا اور بڑے فلاحی اہداف کے لیے ان سے جڑنا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ اے ایم پی مقابلے کی بجائے تعاون پر یقین رکھتی ہے اور مزید کہا کہ ہم مقامی سطح پر کام کرنے والی دیگر این جی اوز کی کامیابیوں سے سیکھنا چاہیں گے اور اے ایم پی کے مختلف کامیاب منصوبوں کو اپنے علاقوں میں نافذ کرنے میں ان کی مدد کریں گے تاکہ زیادہ سے زیادہ لوگ مستفید ہو سکیں۔ فاروق صدیقی، پراجیکٹ ہیڈ – این جی او کنیکٹ اور ایوارڈز کے محرک اپنی ٹیم کے ساتھ، مبارکبادی پروگرام کی میزبانی کی۔ انہوں نے کہا کہ اے ایم پی پچھلے 5 سالوں سے این جی او کنیکٹ پر کام کر رہی ہے اور اپنے 3ای ایس پروجیکٹس کو لاگو کر رہی ہے۔ – تعلیم، روزگار میں مدد اور بااختیار بنانے کے ڈومینز۔ ہم نے این جی اوز اور چینج میکرز کو عزت دینے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ وہ ہماری قوم کی ترقی میں جواہرات کی طرح ہیں۔جیتنے والوں کا انتخاب کرنے والی 10 رکنی جیوری کی قیادت ڈاکٹر ریحان خان سوری، پرو وائس چانسلر – دہلی اسکل اینڈ انٹرپرینیورشپ یونیورسٹی (حکومت این سی آر، دہلی) اور مرزا مبین بیگ، سینئر اے ایم پی ممبر اور انچارج اور جیوری کوآرڈینیٹر ایوارڈز نے کی۔

Related posts

راہل گاندھی کے دورہ کے پیش نظر ہائی الرٹ کے درمیان جموں میں دو دھماکے، 6 زخمی

Hamari Duniya

وزیراعلیٰ کیجریوال نے گجراتیوں کو سمجھایا کیسے بنے گا ہندوستان دنیا کا نمبر ون ملک

Hamari Duniya

پرالی جلانے کو لے کر وزیراعلیٰ یوگی سخت، افسران کو دی سخت ہدایت

Hamari Duniya